Back to: Urdu Notes  

اُردو کی ابتدا کے بارے میں مختلف نظریات   ♦

 

ہند آریائی کے عہد کو تین حصوں میں تقسیم کیا جاسکتا ہے
قدیم ہند آریائی 1500 ق م سے 500 ق م تک۔
وسطی ہند آریائی500 ق م سے1000 تک۔
جدید ہند آریائی 1000سے تا حال۔
سامی خاندان سے عربی اور عبرانی زبان نکلتی ہے۔
دراوڑی زبان جنوبی ہندوستان (دکن) میں رائج ہے۔ تامل، تیلگو، کنڑ، ملیالم اس کی مشہور شاخیں ہیں۔
ہند یوروپی سے ہماری زبان ہندی اور اُردو کا تعلق ہے۔
قدیم ہند آریائی عہد میں چار وید ملتے ہیں۔ رگ وید، یجروید، سام وید، اتھر وید
قدیم ہند آریائی عہد کو گیان چند جین نے دو ادوار میں تقسیم کیا ہے۔ (۱) ویدک سنسکرت (۲) کلاسیکل سنسکرت۔
ڈاکٹر سدیشور ورما نے قدیم ہند آریائی عہد کو پانچ ادوار میں تقسیم کیا ہے۔
آریوں کی آمد کے بعد سب سے پہلے ویدک سنسکرت کے نمونے ملتے ہیں۔
وسطی ہند آریائی میں تین دور ہیں۔ پالی، پراکرت، اپ بھرنش
پالی بدھ مذہب کی زبان تھی۔
گریسن نے ہندوستانی زبانوں کو زبانوں کا ”عجائب گھر“ کہا۔
 مغربی ہندی کی پانچ بولیاں ہیں۔ اور مشرقی ہندی کی تین بولیاں۔
کس ادیب نے اردو زبان کو زبان ہندوستان کہا ہے؟ ج: ملا وجہی
اُردو دراوڑی خاندان کی زبان ہے۔ ج: سہیل بخاری
 اگر مسلمان ہندوستان میں نہ آتے تب بھی جدید ہند آریائی زبانوں کی پیدائیش ہو جاتی لیکن ان کے ادبی آغاز و ارتقاء میں تاخیر ضرور ہو جاتی“ ج: سنیتی کمار چٹرجی
اردو کوہستان کی سرحد سے پیدا ہوئی“ ج: ڈاکٹر جمیل جالبی
اردو مگدھ سے نکلی“ ج: اختر اورینوی
اردو کھڑی بولی سے نکلی ہے“ ج:گیان چند جین
اردو دہلی کی زبان ہے“ ج: سر سید احمد خاں

 

اُردو کی ابتدا کے متعلق کوئز

Mantu

سعادت حسن منٹو معلومات شخصیت پیدائش : 11 مئی ,...

Read More
DMCA.com Protection Status
error: Content is protected !!